- Advertisement -

- Advertisement -

- Advertisement -

- Advertisement -

وزیراعظم کا اپوزیشن تحریک کے پیچھے دوست ملک کے ملوث ہونے کا اشارہ

وزیراعظم کو لگتا ہے کہ اپوزیشن اس لیے اتنی پر اعتماد ہے کیونکہ ان کے پیچھے بیرون ملک ہیں،ممکنہ طور پر عمران خان کا اشارہ عرب ملک کی جانب ہو سکتا ہے جو کچھ عرصہ قبل پاکستان کا بھائی ہونے کی بات کرتا تھا۔ سینئر صحافی ارشاد بھٹی اور رؤف کلاسرا کا تجزیہ

0 6

پاکستان میں سیاسی صورتحال اس وقت عجیب کشمکش کا شکار ہے۔11 اپوزیشن جماعتیں حکومت کے خلاف اکٹھی ہو گئی ہیں اور ہر صورت میں عمران خان کو اقتدار سے ہٹانے کے لیے کوشاں ہیں۔

وزیراعظم کا اپوزیشن تحریک کے پیچھے دوست ملک کے ملوث ہونے کا اشارہ
اپوزیشن جماعتوں کی جانب سے ملک کے مختلف شہروں میں جلسے بھی کیے گئے اور کارکنان کو حکومت مخالف تحریک کے لیے متحد کرنے کی کوشش کی۔

 

عام طور پر جب بھی پاکستان میں اس طرح کی صورتحال پیدا ہو تو اشارہ بیرونی طاقتوں کی جانب جاتا ہے۔اور کہا جاتا ہے کہ پاکستان میں انتشار پیدا کرنے کے پیچھے بیرونی ممالک ہے۔

 

- Advertisement -

اسی حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے سینئر صحافی ارشاد بھٹی کا کہنا ہے کہ وزیراعظم عمران خان کی کالم نگاروں سے ملاقات ہوئی۔اپوزیشن تحریک کے متعلق سوال پر وزیراعظم نے کھل کر کہا کہ اس کے پیچھے چند ملک ہو سکتے ہیں۔

 

- Advertisement -

جس پروگرام میں موجود صحافی رؤف کلاسرا نے کہا کہ پی این اے کی تحریک سے لے کر وکلا تحریک تک تمام کے متعلق کسی نہ کسی طاقت کا کہا جاتا ہے۔انہوں نے کہا کون سی بیرونی طاقت عمران خان کے خلاف ہو سکتی ہے۔

 

روف کلاسرا نے کہا کہ آپ کا اشارہ خلیجی ممالک کی جانب ہے، وہ کچھ عرصہ قبل تو عمران خان کے بھائی بنے ہوئے تھے اب ایسا کیا ہو گیا وہ ان کے مخالف ہو گئے۔

 

۔جس پر صحافی ارشاد بھٹی نے کہا کہ وزیراعظم نے کسی ملک کا نام نہیں لیا۔لیکن آپ خود سوچیں کہ طیب اردوان کو اسلام کا ہیرو بنانے پر کون ناراض ہو سکتا ہے، امریکا اور ایران کے درمیان ثالثی کا کردار ادا کرنے پر کون سا ملک ناراض ہو سکتا ہے۔

 

مسلم امہ کا مل کر ٹی وی چینل بنانے پر کون سا ملک ناراض ہو سکتا ہے، ارطغرل ڈرامہ چلانے پر کون سا ملک ناراض ہو سکتا ہے۔ارشاد بھٹی نے مزید کہا کہ بظاہر لگتا ہے

 

کہ متحدہ عرب امارات اور سعودی عرب کے ساتھ ہمارے تعلقات اچھے نہیں ہیں لیکن نواز شریف کے دور میں یہ تعلقات موجودہ تعلقات سے بھی زیادہ خراب تھے لیکن ملٹری قیادت نے یہ تعلقات بحال کیے۔

 

 

- Advertisement -

- Advertisement -

- Advertisement -