- Advertisement -

- Advertisement -

- Advertisement -

- Advertisement -

ملتان دھرتی کاایوارڈ یافتہ خطاط” الحاج غلام فرید بھٹی “ تحریر :مجیداحمد جائی ملتان

Multan Dharti Award Winning Calligrapher "Alhaj Ghulam Farid Bhatti" Written by: Majida Ahmad Jai Multan

5

اللہ تعالیٰ جب قوموں کی بہتری چاہے ہیں تو عظیم لوگوں کو معرض ِوجود میں لاتے ہیں ۔ جب کسی کو عزت دینا چاہتے ہیں تو اس میں اعلی صفات کے ہنر پیدا کرتے ہیں ۔

 

ملتان دھرتی نے عظیم المرتبت خطاط ،خوش نویس اور مصور پیدا کیے ہیں جن کا کام ہمیشہ کے لیے امر ہو گیا انہی ماہرین میں ایک نام ”الحاج غلام فرید بھٹی صاحب“ کا ہے ۔

 

آپ تدریس کے شعبے سے متعلق ہونے کے باعث ایک عمدہ خطاط اور مصورہیں بلکہ ایک شفیق معلم اور استاد بھی ہیں ۔الحاج غلام فرید بھٹی ایک تاریخ ساز شخصیت ہیں ۔اللہ تعالیٰ نے اُنہیں بے شمار خوبیوں سے نوازا ہے۔

 

- Advertisement -

یہ اللہ کا بندہ اپنی تمام زندگی کی پونجی اللہ کی راہ میں تاج چکا ہے ۔ملک اور بیرون ملک ان کے خطاطی کے نمونے اداروں میں جگمگارہے ہیں ۔ملتان کے تاریخی مقامات پر ان کے خطاطی نمونے عیاں ہیں ۔

 

گھنٹہ گھر کا جناح ہال ،ڈسٹرکٹ کونسل ہال میں ان کی خطاطی اور نقاشی کے امتزاج سے نمایاں ہیں ۔ان کی خطاطی میں کلام اقبال اور قائداعظم کے ارشادات کو عملی جامہ پہنایا ہے ۔

 

بندہ ناچیزکی خوش قسمتی ہے کے پچھلے دِنوں آپ کے دولت خانے پہ حاضری کا شرف حاصل ہوا ۔ آج بھی تقریباًپچاسی ،نوے سال کی عمر میں انکے کے ہاتھ اعلی نمونے پیش کر رہے ہیں ۔

 

ملاقات میں آپ کی آپ بیتی سننے کا موقع ملا اور کتب کا تحفہ بھی عنایت کیا ۔آپ کی کتاب” الفرید اسلامی اسلوب فن خطاطی “میں پیدائش 27جولائی 1935ءلکھتے ہیں ۔سن پیدائش میں اختلاف ہے ،

 

خود بتاتے ہیں کے سن کا معلوم نہیں البتہ جب پاکستان بنا تو میں رضا کاروں میں شامل تھا ۔”میری عمر تقریباً12،13 سال تھی جب پاکستان معرض وجود میں آیا ۔سکھ مسلمانوں کے درپے تھے ۔ساری رات پہرہ دیا جاتا تھا ۔

 

ہندو اور سکھ حویلی سے نکل کر اپنے اپنے کیمپوں میں چلے گئے ۔جہاں اکٹھے ہو کر آگے انڈیا جانا تھا ۔شہر میں لوٹ مار کا بازار گرم تھا۔افراتفری کا عالم تھا ۔مقامی لوگوں میں رضاکارانہ طور پر رضا کار بھرتی ہوئے جن میں بندہ ناچیز بھی شامل تھا۔

 

“آپ کے فن پر”مقالا“لکھا گیا جس میں آپ کی تاریخ پیدائش1943ءلکھی گئی ۔مقالا لکھنے والا حوالے کے طور پرلکھتاہے ”آپ کی صحیح تاریخ پیدائش 1943ءہے جبکہ طارق مسعود کی کتاب مرقع خط مطبوعہ لاہور عجائب گھر لاہور 1981ءص 95پر سہواً1938ءلکھی گئی ہے ۔

 

“یوں مقالا میں لکھی گئی تاریخ بھی غلط ثابت ہوتی ہے ۔کیا چار سالہ لڑکا رضاکارٹیم میں شامل ہو کر ساری ساری رات پہر ہ دیتا ہے ۔اسی طرح رونامہ خبریں کے انٹرویو میں سن پیدائش 1930ءلکھی گئی ہے ۔

 

کون جانتا تھا کہ پیروال چک نمبر 10.R,24دوسری جنگ عظیم کے زمانے میں پیدا ہونے والا بچہ ملتان کی دھرتی کے لیے حوالہ خطاطی بن کر ملک و قوم کا نام روشن کرے گا۔

 

الحاج غلام فرید بھٹی چار بہنوں اور تین بھائیوں کے بعد پیدا ہوئے۔ذوالفقار علی بھٹو کا دِور حکومت میں ملتان ڈویژن کے سکولز و کالجز کے پہلے ڈائریکٹر ایجوکیشن ”غلام محمد ملک“جو بڑے صاحب فن اور صاحب دانش و علم و ادب تھے ۔انہوں نے اس ہیرے کو پہچان لیا اور ملتان لے آئے ۔

 

قدرت نے الحاج غلام فرید بھٹی کو بے پناہ خوبیوں سے نوازا ہے یہی وجہ ہے پوری دُنیا میں آپ کے چرچے ہیں ۔آپ ملتان کی قدیم روایات کے امین ہیں ۔آپ نے ”الفرید خطاطی اکیڈمی “کے نام سے ایک ادارہ قائم کیا جس میں طالب علموں کو سکھانے کے انداز کو صرف تھیوریٹیکل طریقے سے نہیں بلکہ پریکٹیکل پر زیادہ زور دیا ہے ۔

 

- Advertisement -

ایسی ٹھوس سطح پر پہلے کبھی کام نہیں ہوا۔الحاج غلام فرید بھٹی ایک تنا وردرخت کی مثال ہیں جس کے سائے تلے بہت سارے ننھے منے پودے پھل پھول رہے ہیں ۔

 

آپ ایک کہنہ مشق خطاط ہونے کے ساتھ ساتھ ٹینس کے بھی بہترین کھلاڑی رہے ہیں ۔خطاطی کے فنی اُصولوں پر کافی دسترس رکھتے ہیں ۔

 

آپ کے ہاں فکر کی گہرائی بھی بدرجہ اُتم موجود ہے ۔مصورانہ خطاطی کے حوالے سے الحاج غلام فرید بھٹی کے اسمائے ربانی ،اسمائے محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اور قرآنی آیات کے موضوعات باکمال اور دیدہ زیب ہیں جو دیکھنے والوں کو ورطہ حیرت میں ڈال دیتے ہیں اور ان سے دل میں خدا کی عظمت اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی محبت پیدا ہوتی ہے ۔

 

الحاج غلام فرید بھٹی کا فن خطاطی کا سفر جاری و ساری ہے ۔اس سفر میں کامیابیوں کی کئی منزلیں طے کی ہیں ۔تین بار صدارتی ایوارڈ یافتہ ہیںاور کئی انعامات اور اسناد آپ کے فنِ خطاطی کے داد و تحسین کے لیے منہ بولتا ثبوت ہے ۔

 

1977ءکو صدر ضیاالحق سے صدارتی ایوارڈ وصول کیا اورسرکاری وفد کے ساتھ حج کی ادائیگی کا شرف حاصل ہوا ۔وفد کے امیر بنائے گئے اور یوں کئی نامور شخصیات سے ملاقاتیں ہوئیں ۔جن میں مسجد نبوی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے پہلے خوش نصیب پاکستانی خطاط شفیق الزماں ،حرم مدینہ کے نامور قاری عبد الطیف شامل ہیں ۔

 

آپ کے فن خطاطی پر ہر اخبار نے نہ صرف مضمون شائع کیے ہیں بلکہ انٹرویو بھی کیے ہیں ۔اہل ادب و دانشور ،سکالروں ،افسانہ نگاروں ،فکرو دانش اور ماہرین ہنر وفن کے اپنے تاثرات لکھے ہیں ۔

 

بندہ ناچیز الحاج غلام فرید بھٹی کے پاس ان نامورشخصیات کے آٹوگراف محفوظ دیکھ کر اشک بار ہو گیا اور داد وتحسین کے لئے الفاظ ڈھونڈنے لگا لیکن ناکامی کا سامنا ہوا۔

 

پروفیسر ڈاکٹر عاصی کرنالی ،پروفیسر خادم علی ہاشمی ،سید نفیس الحسن رقم ،حکیم محمد سعید ،پروفیسر ڈاکٹر انوار احمد ،پروفیسر ڈاکٹر اسلام صدیق ،نامور صحافی شیخ سلیم ناز،پروفیسر عامر فہیم ،پروفیسر ڈاکٹر انور جمال ،سید سہیل خرم فاروقی ،میجر جنرل راجہ سروپ خان ،احمد نواز گردیزی ،کیپٹن ظفر اقبال سفینہ عابد،جنرل ضیا الحق ،ڈاکٹر اینمل شمل (جرمنی )جنرل غلام محمد ملک،میجر جنرل اعجاز عظیم سفیر امریکہ جیسی کئی شخصیات شامل ہیں ۔

 

الحاج غلام فرید بھٹی فن خطاطی کے حوالے سے دو کتب بھی لکھ چکے ہیں جن میں ”مرقعِ فرید“ اور” الفرید اسلامی اسلوب ِفن خطاطی“ شامل ہیں ۔آپ کے نقش قدم پر چلتے ہوئے آپ کے بیٹے نوید بھٹی بھی صدر پاکستان سے تمغہ امتیاز لے چکے ہیں ۔

 

آپ کو خط ماہی میں ید طولیٰ حاصل ہے ۔آپ نے برطانیہ میں کئی اسلامک سنٹرز اور مساجد پر اسلامی خطاطی کے شاندار کام کے جو ہر دِکھائے ہیں ۔اسی طرح دوسرے بیٹے عامر فرید بھٹی بھی فن خطاطی میں انعامات اور توصیفی اسناد سے نوازے جا چکے ہیں ۔

 

پروین اختر الحاج غلام فرید بھٹی کی دُختر نیک اختر ہیں ۔آپ کو بھی خط نستعلیق اور نسخ میں بڑی دسترس حاصل ہے ۔الحاج غلام فرید بھٹی ایک ورکشاپ کا درجہ رکھتے ہیں

 

اور آپ کے زیر سایہ لاکھوں طالب علم فن ِخطاطی میں جوہر دکھا رہے ہیں ۔حیران کن بات یہ ہے کہ الحاج غلام فرید بھٹی صاحب فن خطاطی میں ملنے والی کامیابیوں کے اخباری تراشے ،تصاویر محفوظ رکھے ہوئے ہیں ۔

 

یو ں یادوں کا جہان آباد کیے بیٹھے ہیں ۔ہمارے وطن اور ملتان دھرتی کے لیے قیمتی ترین اثاثہ ہیں ۔بلاشہ الحاج غلام فرید بھٹی ایک عہد کا نام ہے ۔

 

اللہ تعالیٰ، الحاج غلام فرید بھٹی کو صحت و تندرستی کے ساتھ سلامت رکھے آمین !۔

 

- Advertisement -

- Advertisement -

- Advertisement -

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.