اگلا صدر کون ہوگا ؟ بڑی خبر سامنے آگئی

کولمبو: (ویب ڈیسک) سری لنکا میں صدر کے عہدے کے لیے اپوزیشن جماعتوں کے رہنماؤں کے نام کا اعلان کردیا گیا۔ بین الاقوامی ویب سائٹ کے مطابق  سری لنکا کی بائیں بازو کی جماعت جاتھیکا جنبل ویگیا کے رہنما انورا کمارا دسانائیکے کو صدارتی عہدے کے انتخاب کے لیے ان کا نام تجویز کیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق سری لنکا میں صدر کے عہدے کے لیے اپوزیشن جماعتوں کے رہنماؤں کے نام کا اعلان کردیا گیا۔ بین الاقوامی ویب سائٹ کے مطابق سری لنکا کی بائیں بازو کی جماعت جاتھیکا جنبل ویگیا کے رہنما انورا کمارا دسانائیکے کو صدارتی عہدے کے انتخاب کے لیے ان کا نام تجویز کیا ہے۔ انورا

 

کا نام اپوزیشن لیڈر ساجتھ پریماداسا کے ذریعہ کل شام اسی عہدے کے لیے اپنی امیدواری کے اعلان کے بعد آیا ہے۔ پارلیمنٹ میں قائد حزب اختلاف ساجتھ پریماداسا نے کہا کہ ووٹنگ 225 ایم پیز تک محدود ہے، جس میں گوٹابایا راجا پاکسے اتحاد کا غلبہ ہے، اگرچہ یہ ایک سخت لڑائی ہے، مجھے یقین ہے کہ سچائی کی جیت ہوگی۔ پارلیمنٹ کے اسپیکر نے ہفتے کے روز کہا کہ نئے صدر کے انتخاب کا عمل 8 دن کے اندر مکمل کر لیا جائے گا۔ پارلیمنٹ کے سکریٹری جنرل نے آج باضابطہ طور پر پارلیمنٹ کو مطلع کیا کہ سابق صدر راجا پاکسے نے 14 جولائی سے صدارتی عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے۔ سپریم

 

کورٹ نے سابق وزیر اعظم مہندا راجا پاکسے اور سابق وزیر خزانہ باسل راجا پاکسے کو بغیر اجازت 28 جولائی تک ملک چھوڑنے پر پابندی بھی عائد کر دی ہے۔ خیال رہے سری لنکا میں معاشی بحران سخت مشتعل عوام کی جانب سے ایوان صدر پر دھاوا بولنے کے بعد صدر گوٹا بائے راجا پاکسے ملک سےفرار ہوگئے تھے۔ غیر ملکی خبر رساں ایجنسی کے مطابق صدر کے ملک سے فرار ہونے کے بعد مشتعل مظاہرین نے صدر گوٹابائے راجا پاکسے کے صدارتی محل پر قبضہ کیا۔ دارالحکومت کولمبو میں مظاہرین کو کنٹرول کرنے کیلئے پولیس نے آنسو گیس کے شیل فائر کیے، جہاں پولیس اور مظاہرین کے درمیان شدید جھڑپیں بھی ہوئی تھیں۔



Akhtar Sardar

اپنی رائے کا اظہار کریں