بارش کے بعد کے الیکٹرک کے 200 فیڈرز تاحال ٹرپ

بارش کے بعد کے الیکٹرک کے 200 فیڈرز تاحال ٹرپ ہیں، فیڈرز ٹرپ ہونے کے باعٹ مختکف علاقے تاحال بجلی سے محروم ہیں۔

ترجمان کے الیکٹرک نے اپنے ایک بیان میں کہا کہ اس وقت 1800 سے زائد فیڈرز کے ذریعے بجلی کی فراہمی جاری ہے-

ترجمان کے الیکٹرک کے مطابق حفاظتی بنیادوں پر چند علاقوں کی بجلی عارضی معطل کی گئی لیکن زیادہ ترعلاقوں میں بجلی بحال ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ کے ڈی اے اسکیم 33، کوئٹہ ٹاون، اولڈ جمالی گوٹھ، نیو غریب آباد گوٹھ، کورنگی سیکٹر 10، کورنگی انڈسٹریل ایریا میں بجلی بحال کردی گئی ہے۔‎

‏ ترجمان کے الیکٹرک نے کہا کہ میٹھا در، دارالسلام سوسائٹی، لیاری بومبے بازار، ورجی اسٹریٹ، فاتح محمد گبول گوٹھ اور دیگر علاقوں میں بھی بجلی بحال کردی گئی ہے۔

Advertisement

‏انہوں نے کہا کہ شہریوں سے درخواست ہے کہ بارش اور تیز ہوا کی صورت میں حفاظتی اقدامات کے تحت بجلی کی تنصیبات سے محفوظ فاصلہ رکھیں۔

ترجمان کے الیکٹرک کا مزید کہنا تھا کہ مقامی سطح پر شکایات کے ازالے کیلئے کال سینٹر 118، ایس ایم ایس8119، KE Live App، اور سوشل میڈیا  کے ذریعے رابطہ کیا جا سکتا ہے۔

یاد رہے کہ کراچی میں پری مون سون کی انٹری ہوتے ہی تین روز سے جاری شدید گرمی اور حبس کا زور ٹوٹ گیا۔

کراچی کے شمالی اور شمال مشرقی علاقوں میں آندھی کے ساتھ موسلا دھار بارش ہوئی ۔ جن علاقوں میں بارش ہوئی ان میں سپر ہائی وے، بحریہ ٹاؤن، گڈاپ، سعدی ٹاؤن، ملیر، ماڈل کالونی، ایئر پورٹ، گلشن، سرجانی، نارتھ کراچی اور نیو کراچی شامل ہیں۔

علاوہ ازیں شہر قائد میں آندھی اور تیز بارش کے بعد مختلف مقامات پر حادثات پیش آنے کے باعث تین بچوں سمیت چار افراد جاں بحق ہوگئے۔

کراچی میں بارش اورآندھی سے مختلف علاقوں کی دیواریں گرگئیں، ملیر کے علاقے ملت ٹاؤن  میں گھر کی دیوار گرنے سے سے دو بچے جاں بحق ہوگئے جس میں ایک کی عمر پانچ سال اور دوسرے کی چار سال ہے۔

 محکمہ موسمیات کے دفتر کے  قریب واقع گلشن اریشہ میں  دیوار گرنے سے ایک  شخص جاں بحق ہو گیا جبکہ چنیسر گوٹھ میں بھی دیوار گرنے سے آٹھ سال بچہ زندگی کی بازی ہار گیا۔

اپنی رائے کا اظہار کریں