اہم خبریںپاکستان

‘تمام سرکاری عمارتیں اپریل تک شمسی توانائی پر چلیں گی’

اسلام آباد:

وزیر اعظم شہباز شریف نے منگل کو کہا کہ حکومت نے ملک کے 27 بلین ڈالر کے ایندھن کے درآمدی بل کو کم کرنے کے لیے اگلے چار ماہ کے اندر تمام وفاقی اداروں کی عمارتوں کو شمسی توانائی پر تبدیل کرنے کا منصوبہ بنایا ہے۔

تفصیلات کی نقاب کشائی کرتے ہوئے، وزیر اعظم نے کہا کہ شمسی توانائی میں تبدیلی کے طریقہ کار کو تیز رفتار ہونا چاہیے کیونکہ انہوں نے اس منصوبے پر عمل درآمد کے لیے اپریل 2023 کا وقت مقرر کیا تھا۔

اسلام آباد میں سولرائزیشن کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ منصوبے کے تحت وفاقی حکومت کی تمام وزارتیں، محکمے، اتھارٹیز اور صوبوں میں ان کی شاخیں فوری طور پر شمسی توانائی پر منتقل ہو جائیں گی۔

انہوں نے کہا کہ یہ باقی صوبائی حکومتوں کے لیے ایک ماڈل ہوگا کیونکہ وفاقی حکومت سولرائزیشن کے عمل پر اضافی اخراجات نہیں کرے گی۔

وزیراعظم نے تمام متعلقہ حکام اور اسٹیک ہولڈرز پر بھی زور دیا کہ وہ ٹائم لائن کو پورا کرنے کے لیے اپریل کے آخر تک مطلوبہ عمل مکمل کریں۔

انہوں نے کہا کہ اس پر جلد از جلد عمل درآمد کو اپنا سیاسی، سماجی، قومی اور مذہبی فریضہ سمجھیں۔

وزیراعظم نے کہا کہ ان ہنگامی اقدامات سے وہ 300 میگاواٹ سے 500 میگاواٹ تک کم لاگت بجلی پیدا کر سکیں گے، جس سے درآمدی بل میں ہر سال اربوں ڈالر کی کمی ہو گی۔

وزیراعظم نے یقین دلایا کہ یہ سارا عمل شفاف بولی کے ذریعے کیا جائے گا جس میں تیسرے فریق کو شامل کیا جائے گا۔

انہوں نے صوبائی وزرائے اعلیٰ پر بھی زور دیا کہ وہ وفاقی حکومت کے شروع کردہ پیٹرن کی تقلید کریں اور اپنے اپنے صوبوں میں سولر سسٹم متعارف کرائیں، اس سلسلے میں وفاقی حکومت کی جانب سے مکمل تعاون کا یقین دلایا جائے گا۔

انہوں نے مزید کہا کہ بحیثیت قوم ہماری بقا کا واحد آپشن ہے۔

وزیراعظم نے کہا کہ ملک میں 10 ہزار میگاواٹ شمسی توانائی کی پیداوار کا عمل شروع ہوچکا ہے اور وفاقی حکومت کی عمارتوں سے بات چیت کا پہلا مرحلہ ہوگا۔

یہ بھی پڑھیں: مقامی طور پر سولر پینلز بنانے کے لیے $3.5m اکٹھے کیے گئے۔

روس اور یوکرائن کے تنازع کے بعد ایندھن اور گیس کی آسمان چھوتی قیمتوں کی وجہ سے ملک کو درپیش معاشی چیلنجوں کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ پاکستان جیسے ترقی پذیر ممالک کو اس کا خمیازہ بھگتنا پڑا۔

انہوں نے کہا کہ 27 بلین ڈالر کا مہنگا ایندھن کا درآمدی بل پاکستان جیسے ممالک کے لیے ایک بڑا چیلنج تھا، انہوں نے مزید کہا کہ جاری تنازعہ نے گیس کی قیمتوں میں بھی اضافہ کیا ہے اور یورپ کو سپلائی متاثر ہونے کے باعث اس کی دستیابی مزید خراب ہو گئی ہے۔

وزیراعظم نے کہا کہ کووِڈ وبا کے دوران گیس کی قیمتیں کم ترین سطح پر گر گئیں اور اسے 2 ڈالر فی یونٹ فروخت کیا گیا، اس وقت کی حکومت نے اس کی درآمد کو محفوظ نہ بنا کر مجرمانہ غفلت کا ارتکاب کیا اور اس کی وجہ سے اب پوری قوم پریشان ہے۔ تکلیف

انہوں نے کہا کہ سابق وزیراعظم نواز شریف کے دور میں قطر کے ساتھ برینٹ کے 13.2 فیصد پر ایل این جی کی خریداری کا 15 سالہ معاہدہ ہوا تھا لیکن بدقسمتی سے اس کے بعد آنے والی حکومت نے اس پر سیاست کی۔

اب عالمی حالات کی وجہ سے گیس دستیاب نہیں تھی جبکہ ایندھن عالمی مارکیٹ میں مہنگے داموں فروخت ہو رہا تھا، انہوں نے کہا کہ انہیں بجلی کی رفتار سے شمسی اور قابل تجدید توانائی میں تبدیل کرنا ہو گا۔

وزیراعظم نے کہا کہ مسلم لیگ (ن) کی سابقہ ​​حکومت کے دور میں سستی پن بجلی کی پیداوار کے لیے کوششیں کی گئیں اور بھاشا ڈیم کی تعمیر کے لیے 100 ارب روپے کی اراضی حاصل کی گئی لیکن یہ ملک میں سستی بجلی پیدا کرنے کے لیے طویل المدتی اقدامات تھے۔ .

انہوں نے کہا کہ چین پاکستان اقتصادی راہداری کے تحت مسلم لیگ (ن) کی حکومت نے 2015 کے دوران ملک میں 20 گھنٹے بجلی کی بندش پر قابو پانے کے لیے کوئلے اور گیس سے چلنے والے منصوبے مکمل کیے تھے۔

"سرسبز زمینیں بنجر ہو گئیں، صنعتیں ٹھپ ہو گئیں، ملکی برآمدات ٹھپ ہو گئیں”، وزیر اعظم نے ماضی کو یاد کرتے ہوئے کہا کہ مشکل کی اس گھڑی میں سابق وزیر اعظم نواز شریف ڈٹے رہے اور بیل کو سینگوں سے پکڑ لیا۔ پاور پلانٹس لگائے اور اس طرح لوڈ شیڈنگ کا خاتمہ کیا جو کہ ایک بڑی کامیابی تھی، جو ملک کی تاریخ کا ایک بہترین باب ہے، جس سے قوم مضبوط ہو رہی ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button