اہم خبریںپاکستان

نااہل حکمران عوام کو دہشت گردی سے بچانے میں ناکام رہے، عمران خان

لاہور:

سابق وزیراعظم اور پی ٹی آئی کے چیئرمین عمران خان نے ملک بھر میں تیزی سے بڑھتے ہوئے دہشت گردی کے واقعات پر شدید تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ ’’نااہل حکمران عوام کے جان و مال کے تحفظ میں بری طرح ناکام ہو چکے ہیں‘‘۔

پیر کو لاہور میں پارٹی قیادت کے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ معاشی بحران کے بعد ملک میں دہشت گردی کے واقعات میں غیر معمولی اضافہ ہوا ہے۔

پی ٹی آئی رہنما نے ملک کی مجموعی سیاسی صورتحال، بگڑتی ہوئی معاشی صورتحال اور بڑھتی ہوئی دہشت گردی سمیت اہم امور پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا۔

سابق وزیراعظم نے کہا کہ ’’معاشی انتشار کے ذمہ دار کرپٹ، بے ایمان اور نااہل حکمران اب عوام کے جان و مال کے تحفظ میں بری طرح ناکام ہو چکے ہیں‘‘۔

آٹھ ماہ قبل ملک معاشی طور پر مستحکم تھا جب کہ دہشت گردی کا عملاً خاتمہ ہو چکا تھا۔ ان بدعنوان اور بے ایمان لوگوں کو یہ اختیار دیا گیا کہ وہ معیشت اور قومی سلامتی سے کھیل سکیں اور خود کو NRO-2 (عام معافی) سے نوازیں۔

"حالیہ دنوں میں ملک میں دہشت گردی کے واقعات میں 52 فیصد اضافہ دیکھا گیا ہے جس میں 270 افراد ہلاک اور 550 سے زائد زخمی ہوئے ہیں۔ میں نے ایک سازش کے ذریعے اپنی حکومت بدلنے سے پہلے نتائج سے خبردار کر دیا تھا۔ عمران نے کہا کہ گزشتہ آٹھ ماہ سے ہم مسلسل خبردار کر رہے ہیں کہ مسلط، کرپٹ اور نااہل حکمران قوم کو تباہی کی طرف دھکیل رہے ہیں۔

ان کے بقول، آزاد معاشی ماہرین تجویز کر رہے تھے کہ پاکستان کو انتہائی سنگین صورتحال کا سامنا ہے اور انہوں نے مزید کہا کہ آٹے کی قیمت میں دو گنا اضافہ ممکنہ طور پر لاکھوں غریب لوگوں کو خوراک سے محروم کر دے گا۔

"معیشت کو تباہ کرنے کے بعد، درآمد شدہ حکومت سیکورٹی فراہم کرنے میں ناکام رہی، جو کہ بہت تشویشناک ہے۔ خطے سے امریکہ کے انخلاء کے باوجود، ہماری حکومت نے بہترین سفارتی حکمت عملی کے ساتھ قوم کو اس کے نتائج سے بچایا۔

ان کا خیال تھا کہ قومی سلامتی کو ’’نادان‘‘ وزیر خارجہ بلاول بھٹو زرداری کے رحم و کرم پر چھوڑنا مجرمانہ غفلت ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ "ہم ملک کی صورتحال پر گہری نظر رکھے ہوئے ہیں اور ہم قوم کو کسی بڑی تباہی کی طرف لے جانے کی کسی بھی کوشش کی بھرپور مزاحمت کریں گے۔”

انہوں نے اسنیپ پولز کے اپنے مطالبے کا اعادہ کیا، جو ان کی رائے میں ملک کو تباہی سے بچانے کا واحد راستہ تھا۔ "صرف حقیقی معنوں میں عوامی مینڈیٹ والی حکومت ہی معیشت کو سنبھال سکے گی اور دہشت گردی کو کنٹرول کر سکے گی”۔

قومی اسمبلی کے استعفوں کی حکمت عملی

ملاقات میں پی ٹی آئی رہنماؤں نے پی ٹی آئی کے اراکین قومی اسمبلی کے استعفوں سے متعلق حکمت عملی پر تبادلہ خیال کیا۔

اجلاس میں سپیکر قومی اسمبلی راجہ پرویز اشرف کے غیر ملکی دورے پر جانے کی مذمت کی گئی، یہ جانتے ہوئے کہ پی ٹی آئی کے ایم این ایز استعفوں کی تصدیق کے لیے ان سے ملنے آرہے ہیں۔ شرکاء نے اسپیکر کے اس عمل کو پارلیمنٹ کی توہین قرار دیا۔

اس موقع پر سابق وزیر خزانہ اور پی ٹی آئی کی اقتصادی ٹیم کے سربراہ شوکت ترین نے اجلاس کو اشیائے خوردونوش بالخصوص آٹے کی قیمتوں میں اضافے کے عام آدمی پر پڑنے والے اثرات سے آگاہ کیا۔ پی ٹی آئی رہنماؤں نے اپنے شہریوں کے لیے امریکا اور یورپی یونین کی ٹریول ایڈوائزری پر بھی تشویش کا اظہار کیا۔

دریں اثنا ذرائع کے مطابق پی ٹی آئی چیئرمین کو ان کی قانونی ٹیم نے لاہور ہائیکورٹ کے فیصلے کی روشنی میں پنجاب اسمبلی کی تحلیل پر بریفنگ دی۔ انہیں بتایا گیا کہ پنجاب اسمبلی کو 11 جنوری سے پہلے تحلیل نہیں کیا جا سکتا کیونکہ یہ معاملہ عدالتی فیصلے کے ساتھ مشروط طور پر منسلک کر دیا گیا ہے۔

قانونی ماہرین نے سابق وزیراعظم کو مزید بتایا کہ پنجاب اسمبلی کے سپیکر سبطین خان کے فیصلے کے بعد تحریک عدم اعتماد کی قانونی حیثیت بھی ختم ہو گئی۔ ان کا کہنا تھا کہ گورنر پنجاب بلیغ الرحمان کو وزیراعلیٰ پرویز الٰہی سے دوبارہ ایوان سے اعتماد کا ووٹ لینے کا مطالبہ کرنا ہوگا۔

معیشت پر وائٹ پیپر

بعد ازاں میڈیا سے خطاب کرتے ہوئے پی ٹی آئی کے سینئر نائب صدر فواد چوہدری نے کہا کہ ان کی جماعت ملک کی معاشی صورتحال پر وائٹ پیپر جاری کرنے جارہی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ پی ٹی آئی چیئرمین نے معاشی ماہرین کا اجلاس طلب کیا ہے جس میں ملک کی معاشی صورتحال پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا جائے گا اور معاشی ماہرین کی تجاویز کی بنیاد پر پارٹی وائٹ پیپر جاری کرے گی۔

انہوں نے مزید کہا کہ پی ٹی آئی نے بنیادی اصلاحات کے لیے ورکنگ گروپس بنائے ہیں جو ملکی معیشت اور گورننس سے متعلق تجاویز تیار کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کا خیال تھا کہ موجودہ حکمرانوں سے نجات کے بعد بڑی اصلاحات کے بغیر ملک دلدل سے نہیں نکل سکتا۔

پارٹی کی سینئر قیادت کے اجلاس کے حوالے سے بات کرتے ہوئے انہوں نے انکشاف کیا کہ اس میں مسلم لیگ (ق) کے رہنما مونس الٰہی نے بھی شرکت کی اور رہنما پنجاب اسمبلی کی تحلیل کے حوالے سے حکمت عملی پر بالکل واضح ہیں۔ ہم نے پنجاب کی پارلیمانی پارٹی کے اجلاس کی تاریخ کا فیصلہ کر لیا ہے، جو وقت آنے پر سامنے آئے گی۔ ہمارے تمام 187 ایم پی اے اجلاس میں شرکت کریں گے۔

انہوں نے یہ بھی یقین ظاہر کیا کہ انتخابات اپریل میں ہوں گے کیونکہ ملک ‘اسنیپ پولز’ کی طرف بڑھ رہا ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button