عمران خان پاکستانی معیشت کی بربادی کے ذمہ دار ہیں، سعید غنی

وزیر محنت و افرادی قوت سندھ سعید غنی نے کہا ہے کہ عمران خان پاکستانی معیشت کی بربادی کے ذمہ دار ہیں۔

سعید غنی نے عمران خان کے خطاب پر ردعمل دیتے ہوئے کہا کہ عمران نیازی قوم سے کئے گئے جھوٹے وعدوں کا جواب دیں، بتائیں ایک کروڑ نوکریوں اور پچاس لاکھ گھروں کا کیا ہوا؟

ان کا کہنا تھا کہ عمران خان نے گوگی بچاؤ مہم کے آغاز کا اعلان کر دیا ہے، ان کی سیاست کا واحد مقصد گوگی اور گوگوؤں کو بچانا رہ گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ عمران خان آج بھی مودی کی انتخابی مہم چلا رہے ہیں، پاکستانی نژاد میئر لندن صادق خان کی مخالفت عمران نیازی کا ایجنڈا واضح کرتی ہے۔

سعید غنی نے کہا کہ عمران نیازی کی نالائق حکومت نے چینی اور گندم پہلے برآمد اور پھر درآمد کی، نیازی حکومت کے دور میں پاکستان میں کرپشن میں اضافہ ہوا، ہر تبادلے پر عمرانی گوگیاں مال پکڑتی رہی ہیں۔

Advertisement

واضح رہے کہ چیئرمین تحریک انصاف عمران خان نے 25 مئی کو اسلام آباد لانگ مارچ کا اعلان کیا ہے۔

پشاور میں کورکمیٹی کے اجلاس کے بعد پریس کانفرنس کرتے ہوئے سابق وزیراعظم عمران خان نے کہا تھا کہ پی ٹی آئی کور کمیٹی اجلاس میں لانگ مارچ کا فیصلہ کرلیا ہے ، حقیقی آزادی مارچ 25 مئی کو کیا جائے گا اور میں سری نگر ہائی وے پر دوپہر 3 بجے آپ سے ملوں گا، صرف پی ٹی آئی ورکرز کو نہیں بلکہ پوری قوم کودعوت دے رہا ہوں، سب خواتین کوبھی لانگ مارچ میں شرکت کی دعوت دے رہا ہوں۔

عمران خان نے کہا تھا کہ ہمارامطالبہ ہے کہ اسمبلی تحلیل کریں اورالیکشن کا اعلان کریں اور اداروں نے کہا ہے کہ ہم نیوٹرل ہیں تو پھرنیوٹرل رہیں، ابھی بتارہا ہوں ،  2 دن پہلے انٹرنیٹ بند کردیا جائے گا جب کہ ہمارے پرامن مارچ میں رکاوٹ ڈالی گئی تو قانونی کارروائی کریں گے۔

چیئرمین پی ٹی آئی کا کہنا تھا کہ ان چوروں کی موجودگی میں قوم کا کوئی مستقبل نہیں ہے، اقتدار میں آنے والوں پر کیسز ہیں،  مفرور باہر سے بیٹھ کر فیصلے کر رہا ہے،  چوروں کو وزیراعظم اور وزیراعلیٰ بنا دیا گیا، یہ قوم کی توہین ہے، ملک کا وزیراعظم ضمانت پر ہے، یہ اقتدارمیں صرف اپنے مقدمات ختم کرنے آئے تھے، اس ملک کے 22 کروڑ عوام کو ٹشو پیپر کی طرح استعمال کیا گیا۔

عمران خان نے کہا تھا کہ میرے بارے میں کہا گیا وزیراعظم روس چلا گیا ، یہ حکم نہیں مانتا اسے نکالو، روس سے 30 فیصد کم قیمت پرتیل خریدنے کیلئے بات چیت کررہے تھے اور عسکری قیادت کے مشورے سے روس کا دورہ کیا تھا، لیکن اب اس حکومت کی جرات نہیں کہ روس سے سستا تیل لے۔

انہوں نے کہا تھا کہ بھارت نے روس سے سستا تیل لے کراپنی عوام کوفائدہ دیا، بھارت نے کل اپنے ملک میں عوام کے لیے پیٹرول اور ڈیزل سستا کیا جب کہ بیرون ملک پاکستانیوں نے ریکارڈ پیسہ ملک میں بھیجا اور ہم نے ریکارڈ ٹیکس اکٹھا کیا جس سے پیٹرول اور ڈیزل پر سبسڈی دی لیکن ان کے پاس کوئی پلان یا روڈ میپ نہیں۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ ہم ملک کو مشکل حالات سے نکال رہے تھے کہ کورونا آگیا، جب حکومت میں آئے تو پاکستان کا 20 ارب ڈالر کا بیرونی خسارہ تھا، ہماری حکمت عملی کی دنیا مثال دیتی تھی، ملک میں مہنگائی کی صورتحال تشویشناک ہے، ان کا تجربہ صرف کرپشن کرنے کا تھا۔

سابق وزیراعظم نے کہا تھا کہ آئی ٹی کی ایکسپورٹس پہلی دفعہ 75 فیصد تک بڑھیں ، ہم نے ملک اورعوام کو کورونا کے نقصانات سے بچایا، حکومت ہٹانے کے بعد کیا ہوا سب عوام کے سامنے ہے اور روپیہ گرنے کے بعد ملک میں مہنگائی کا نیا طوفان آنے والا ہے۔

انہوں نے کہا تھا کہ ہماری جی ڈی پی گروتھ 6 فیصد پر تھی، ملک آگے بڑھ رہا تھا، 1960 کی دہائی کے بعد پہلی بار ملک آگے بڑھ رہا تھا، ملک میں ریکارڈ فصلیں ہوئیں، کسانوں کو پیسہ ملا جب کہ جب ہم اقتدارمیں آئے تو ملک دیوالیہ ہونے کے قریب تھا، ہماری حکومت میں ریکارڈ ترقی ہوئی ، خطے میں سب سے زیادہ روزگار پاکستان میں تھا۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ حکومت کی تبدیلی کیلئے امریکی سازش ہوئی، یہ سازش میرے خلاف نہیں ملک کے خلاف ہوئی ہے، امریکا نے ملک کے کرپٹ ترین لوگوں کو ساتھ ملایا، اگست کے بعد سازش کا انکشاف ہوگیا تھا، بدقسمتی سے ہم سازش کونہیں روک سکے۔

عمران خان کا مزید کہنا تھا کہ 7 مارچ کو امریکی انڈرسیکریٹری نے ہمارے سفیر کو دھمکی دی، کوشش کرتے رہے کہ یہ سازش کامیاب نہ ہو، پارٹی چھوڑنے کیلیے ارکان کو 20،20 کروڑکی آفردی گئی۔

 

اپنی رائے کا اظہار کریں