اہم خبریںپاکستان

آئی ایس آئی کے سابق سربراہ فیض حمید نے سیاست میں آنے کی افواہوں کو مسترد کردیا۔

انٹر سروسز انٹیلی جنس (آئی ایس آئی) کے سابق سربراہ لیفٹیننٹ جنرل (ر) فیض حمید نے ان قیاس آرائیوں کو رد کر دیا ہے کہ وہ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) میں شامل ہو کر سیاسی میدان میں اترنے کا منصوبہ بنا رہے تھے۔

مقامی میڈیا کی رپورٹ کے مطابق، سابق جاسوس نے اپنے سیاست میں آنے یا پی ٹی آئی کی قیادت کرنے کی افواہوں کو "مکمل طور پر غلط” قرار دیا۔

سابق جنرل کا حوالہ دیتے ہوئے کہا گیا کہ "میں دو سالہ بار سے پہلے یا بعد میں سیاست میں شامل نہیں ہوں گا[آئینمیںریٹائرڈسرکاریافسرانکےلیے”۔[inConstitutionforretiredgovernmentofficers”theformergeneralwasquotedassaying

ان کا یہ بیان ان کی ایک ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہونے کے بعد سامنے آیا ہے جس میں سابق تھری اسٹار جنرل کو ان کے آبائی شہر چکوال میں مبینہ طور پر پی ٹی آئی کی مقامی قیادت کی جانب سے منعقدہ ایک تقریب میں شرکت کرتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے۔

ویڈیو میں ایک نامعلوم شخص نے اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے ریٹائرڈ جنرل کی خدمات کو سراہتے ہوئے ان پر زور دیا کہ وہ سیاست میں آکر ملک کی بہتری کے لیے اپنا کردار ادا کریں۔

گزشتہ ماہ اس وقت کے کور کمانڈر بہاولپور لیفٹیننٹ جنرل فیض نے آرمی چیف کے عہدے کے لیے نظر انداز کیے جانے کے بعد قبل از وقت ریٹائرمنٹ کی درخواست کی تھی۔

سابق جنرل چئیرمین جوائنٹ چیفس آف اسٹاف کمیٹی (سی جے سی ایس سی) اور چیف آف آرمی اسٹاف کے عہدوں کے لیے زیر غور چھ سب سے سینئر جنرلز میں شامل تھے۔

یہ بھی پڑھیں: لیفٹیننٹ جنرل فیض حمید کا جلد ریٹائرمنٹ لینے کا فیصلہ: خاندانی ذرائع

حکومت نے سنیارٹی کے اصول پر چلتے ہوئے جنرل عاصم منیر کو آرمی چیف اور جنرل ساحر شمشاد کو چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی مقرر کیا۔

وہ کئی سالوں تک مختلف وجوہات کی بنا پر اسپاٹ لائٹ میں رہے۔

وہ سب سے پہلے اس وقت نمایاں ہوئے جب وہ انٹر سروسز انٹیلی جنس (آئی ایس آئی) کے انسداد انٹیلی جنس ونگ کی سربراہی کر رہے تھے، جسے DG-C کے نام سے جانا جاتا ہے۔ ان کا نام اس معاہدے پر سامنے آیا جس پر حکومت نے تحریک لبیک (ٹی ایل پی) کے ساتھ نومبر 2017 میں فیض آباد میں 21 دن سے جاری دھرنا ختم کرنے کے لیے دستخط کیے تھے۔

بعد میں انہیں لیفٹیننٹ جنرل کے عہدے پر ترقی دی گئی اور بعد ازاں وہ آئی ایس آئی میں اس کے سربراہ کے طور پر واپس آگئے۔ مسلم لیگ ن نے بارہا ان پر الزام لگایا کہ وہ اپنی قیادت کے خلاف سزاؤں کو یقینی بنانے کے لیے عدالتوں پر اثرانداز ہو رہے ہیں۔

وہ ایک اور تنازعہ کے مرکز میں تھے جب اس وقت کے وزیر اعظم عمران خان چاہتے تھے کہ وہ بطور ڈی جی آئی ایس آئی برقرار رہیں لیکن اس وقت کے آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کے پاس کچھ اور منصوبے تھے۔

وہ لوگ جو جنرل (ر) فیض کو جانتے اور کام کرتے ہیں کہتے ہیں کہ وہ ایک شاندار افسر ہیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button