- Advertisement -

- Advertisement -

- Advertisement -

- Advertisement -

ایک کالم ٹریفک پولیس کے نام عمر فاروق ناز۔گوجرانوالہ

A column in the name of traffic police Omar Farooq Naz, Gujranwala

16

دن ہو یا رات گرمی ہو یا جاڑے کی سخت سردی موسم کوئی بھیج ہو وقت جیسا بھی ہو قوم کی رہنمائی کے لیے لوگوں کی مشکالات کو حل کرنے کی لگن میں ایک فورس ہر وقت موجود رہتی ہے جیسے ٹریفک پولیس کہا جاتا ہے ،

 

 

میں اکثر سفر میں دیکھتا ہوں کہ جب گرمی اپنے پورے جوبن پر ہوتی ہے ہر انسان پسینے میں شرابور ہوتا ہے نفسا نفسی کا عالم ہوتا ہے تب بھی آپ کو جابجا ٹریفک پولیس کے اہلکار نظر آئیں گے سردی کی لہر چل رہی ہو یا طوفانی بارشوں کا سلسلہ ہو تب بھی اپنی ڈیوٹی کو احسن طریقے سے سر انجام دیتے دکھائی دیئے جائیں گے ،

 

 

اس وقت پوری دنیا میں ٹریفک کا ایک بڑا مسئلہ پیدا ہوچکا ہے ٹیکنالوجی کا دور ہے بڑی گاڑیوں کی اکثریت بہت زیادہ ہوچکی ہے وہ لوگ جو بائک چلاتے تھے اب کاروں پر شفٹ ہو چکے ہیں روڈوں کی کشادگی اب کم ہوچکی ہے جس کی وجہ سے ٹریفک کے بہت زیادہ مسائل پیدا ہو رہے ہیں لیکن ان سب پرابلموں کے باوجود ٹریفک پولیس کے اہلکار اپنی ڈیوٹی کو سرانجام دیتے دکھائی دیتے ہیں ،

 

 

- Advertisement -

میں ٹریفک پولیس کے ڈیپارٹمنٹ کو خراجِ عقیدت پیش کرتا ہوں کہ قائد کے فرمان کام ، کام ، پھر کام کے موٹو کے مطابق اپنی ڈیوٹی کو سرانجام دینے کا سلسلہ جاری رکھے ہوئے ہیں ، ان سب خوبیوں کے باوجود کہیں نہ کہیں محکمانہ کوتاہیاں بھی سرزد ہوتی بھی نظر آتی ہیں جس سے عوام سارا ملبہ پورے ڈیپارٹمنٹ پر ڈال دیتی ہے ایسا کرنا بھی سرا سر زیادتی ہے ،

 

 

- Advertisement -

آئیے ٹریفک پولیس کے مسائل پر بھی تھوڑی نظر ڈالتے ہیں گلوبلائزیشن پر نظر دوڑائیں تو آبادیوں میں اضافہ اور روڈوں پر جابجا تجاوزات کا بہاؤ بہت زیادہ ہوچکا ہے جس کی وجہ سے سارا بوجھ ٹریفک پولیس کے کندھوں پر آگیا ہے

 

 

جس سے محکمہ کی کارکردگی پر لوگ سوال اٹھاتے ہیں ایک عام شہری اور کالم نگار کی نظر میں میرا بطور شہری ہم سب کا فرض بنتا ہے کہ ہم اپنے اپنے فرایض کو پوری ایمانداری سے سر انجام دیں روڈ پر جاتے ہوئے ہمارے اندر حوصلہ اور قوت برداشت ہونی چاہیے تاکہ ہماری جلد بازی میں کسی دوسرے کا نقصان نہ ہو عدم برداشت کی وجہ سے لوگوں نے خود با خود اپنے مسائل بڑھا لیے ہیں جس کی وجہ سے ہم روڈ پر ٹریفک کے معاملے میں لڑتے جھگڑتے نظر آتے ہیں ،

 

 

یہاں پر قوموں کا اصل امتحان شروع ہوتا ہے کہ وہ کتنا نظم و ضبط سے کام لیتی ہے ، میں موجودہ سی ٹی او گوجرانولہ محمد آصف صدیق کو خراجِ تحسین پیش کرتا ہوں کہ وہ اپنے فرایض کو احسن طریقے سے سر انجام دے رہے ہیں اور ان کا آئے روز ٹریفک کے معاملات میں عوام میں گھل مل جانا اور ٹریفک آگاہی پروگرام سیمنار کا انعقاد کروانا یقیناً ایک مثبت اقدام ہے

 

 

جس میں عوام کو شعور دینا شامل ہے ، بہترین قومیں وہی کہلاتی ہیں جو قانون کا مکمل احترام کرتی ہیں آئیے ہم سب مل کر اپنے ملک کے کے لیے اپنے اداروں کے ساتھ مل کر کام کرنے کا عظم کریں تاکہ آنے والی نسلیں بھی ہیمں یاد رکھیں ،

 

 

میں ٹریفک پولیس کے ادارہ کو سیلوٹ پیش کرتا ہوں کہ وہ ملک کے ہر شہری کی سہولت اور آسانی دینے کے لیے ہر وقت میدان عمل میں موجود ہے اس کے لیے ٹریفک پولیس کے نیچے سے لےکر اوپر تک کا ہر فرد ہمارے لیے فخر کا باعث ہے ،

 

 

- Advertisement -

- Advertisement -

- Advertisement -

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.